دجالی کردار کو احادیث صحیحہ کی روشنی میں واضح کیا جاتا تو مسئلے کا حل نکلتا

485
0

نوشتۂ دیوار کے مدیر مسؤل نادرشاہ نے کہا کہ قرآن وسنت میں طلاق سے رجوع کا مسئلہ بالکل واضح تھامگرظالمانہ معاشرتی نظام کو ختم کرنیوالا اسلام اجنبی بن گیا۔ صحیح بخاری کی حدیث میں ہے کہ ضروری نہیں کہ دجال کو لوگ پہچانیں مگر اللہ جانتاہے۔ملا عمرؒ کے فرشتوں کو بھی پتہ نہ ہوگا کہ وہ استعمال ہوا۔ دنیا میں امریکہ نے مسلمان کا خون مسلمان کے ہاتھ سے بہایا۔ آج بھی مسلمانوں پرہی خود کش حملے کا موقع ڈھونڈتے ہیں اورجب افغانستان میں حملہ ہو تو الزام مسلم ریاست پاکستان پر ڈالا جاتا ہے اور پاکستان پر حملہ ہو تو الزام افغانستان پر ڈالا جاتا ہے۔ دجالی کردار کو احادیث صحیحہ کی روشنی میں واضح کیا جاتا تو مسئلے کا حل نکلتا۔ طلحہؓ، علیؓ اور زبیرؓ 10افراد میں تھے جن کو دنیا میں جنت کی بشارت ملی لیکن وہ آپس کی جنگوں سے نہ بچ سکے تھے۔حالانکہ نبیﷺ نے واضح فرمایا تھا کہ میرے بعد کافر نہ بن جانا کہ ایک دوسرے کی گردنے مارنے لگو۔ اسوقت را،سی آئی اے اور موساد بھی نہ تھی، آج مسلمان اپنی دنیا وآخرت کو بنائیں۔