اے ایس آئی محمد بخش کی بہادری اور 13 سالہ آرزو راجہ کی شادی

101
0

پولیس والے کے گھروالوں نے مظلوم عورت اور اس کی یرغمال بچی کوبازیاب کرانے کیلئے جو کام کیا اس کا کریڈٹ سندھ پولیس ، کلچر اور دھرتی کو یقینا جاتا ہے لیکن اصل کردار محمد بخش کے گھر والوں کا ہے۔ اگرعورت مضبوط کردار ادا کرے، خواتین کو مضبوط کیا گیا اور معاشرے میں مواقع دئیے گئے تو ہماری پاک دھرتی پاکیزہ بن سکتی ہے۔ لودھراں سے آئی ہوئی مہمان دلہن کو قائداعظم کے مزار پر زیادتی کا نشانہ بنانے والے بھی سزا سے چھوٹ گئے۔ وزیرستان کا مقولہ ہے کہ ”میرے باپ مرجائیں اور میں اچھل کود کیلئے فارغ ہوجاؤں” انگریز کے جانے کے بعد یتیم انتظامیہ نے دھرتی کے اخلاقیات کا کباڑہ کردیا۔ قائداعظم نے اپنی دختر کو غیرمسلم کزن کیساتھ جانے دیا ، اسکے مزار کے اندر کا حصہ قائداعظم کے باغی نہیں چہیتے استعمال کرتے تھے۔ مجرم کا یہ کہنا زیادہ گھناونی بات ہے کہ اس نے عورت کو 11ہزار میں خریدا لیکن یہ روش تو چل رہی ہے۔ 13سالہ آرزو سے ناجائز تعلق بڑا جرم ہے۔ نبیۖ نے فرمایا کہ ”جس نے ولی کی اجازت کے بغیر نکاح کیا تو اس کا نکاح باطل ہے ،باطل ہے ،باطل ہے”۔ آرزو کو اسلام مبارک ہو لیکن حدیث پر عمل کرکے والدین کے پاس چلی جائے۔ مسلمان دوسرے مسلمان کی لڑکی کو ورغلائے تو جرم ہے، اگر اسلام کو ڈھال بناکر استعمال کیا جائے تو یہ مزید بڑا جرم ہے۔آرزو حدیث کی بنیاد پر شوہر کو چھوڑ کر والدین کے پاس جائے تو عیسائی دنیا اسلام کو سلام کرے گی۔